Hassas Edaray

600.00

Book Details

Weight 0.8 kg

برگیڈیر رٹائرڈ احمد ارشاد ترمذی نے اپنی کتاب ” حساس ادارے ” میں ذولفقار علی بھٹو اور ہنری کسنجر کی ایک فیصلہ کن ملاقات کا ذکر کیا ہے ۔ یہ ملاقات نو اگست 1976 کو ہوئی جس میں ہنری کسنجر نے بھٹو کو فرانس سے ایٹمی ریپروسیسنگ پلانٹ کے سودے سے باز رہنے کا کہا ۔۔۔ مگر بھٹو اس کا معاہدہ پہلے ہی فرانس سے کر چکے تھے ۔ ہنری کسنجر کو اس ملاقات سے یہ ظاہر ہو چکا تھا کہ بھٹو کا فیصلہ اٹل ہے اور وہ ہر حال میں پاکستان کو ایٹمی طاقت بنانا چاہتے ہیں ۔

کسنجر نے جہاز پر سوار ہونے سے پہلے بھٹو سے کہا کہ ” مسٹر بھٹو ہم تمہیں عبرت کا نشان بنا دیں گے ” مزید وضاحت کرتے ہوے مثال دی کہ ” سامنے سے آتی ہوئی ریل گاڑی دیکھ کر پٹری سے ہٹ جایا کرتے ہیں ” ۔ بھٹو جواب میں صرف مسکرا دیے ۔

بائیں بازو کے جو دوست اس گمان میں تھے اور ہیں کہ
بھٹو کو پھانسی شائد سوشلزم کے خیالات کی وجہ سے ہوئی انتہائی غلط اندازہ ہے ۔۔۔ بھٹو خود اس بات کا اطراف کر چکے تھے کہ ” انہوں نے پاکستان میں اسلامی سوشلزم کے زریعہ سے کیمونزم کا راستہ روکا ” ۔۔۔ سو بھٹو کی پھانسی کی اصل وجہ پاکستان کا ایٹمی پروگرام تھا ۔

(عدیل حسن)

Reviews

There are no reviews yet.

Be the first to review “Hassas Edaray”

Your email address will not be published. Required fields are marked *